فالج کے مریضوں کے لیے دماغی غذائیت، یہ صحیح رہنما ہے۔

جب آپ فالج کا شکار ہوں گے تو زندگی بہت بدل جائے گی۔ صرف سرگرمی ہی نہیں، آپ کو اپنی خوراک بھی تبدیل کرنی ہوگی۔ آپ کو فالج کے مریضوں کے لیے دماغی غذائیت پر توجہ دینی چاہیے تاکہ شفا یابی میں مدد مل سکے۔ صحت مند طرز زندگی شروع کرنے سے دوسرے فالج سے بچا جا سکتا ہے۔ اس کے لیے ذیل میں معلوم کریں کہ فالج کے شکار افراد کو کن غذائی اجزاء کی ضرورت ہے۔

فالج کے شکار افراد کے لیے دماغی غذائیت کو برقرار رکھنے کی اہمیت

اسٹروک اس وقت ہوتا ہے جب دماغ میں خون کا بہاؤ اچانک کم ہو جاتا ہے۔ اس سے دماغ کو نقصان پہنچتا ہے۔ اس کے علاوہ، فالج سے بچ جانے والوں کی بنیادی طبی حالتیں ہیں، جیسے ہائی بلڈ پریشر، دل کی بیماری، اور ڈیمنشیا۔ کھانے کا انتخاب فالج کی بحالی کی کلید ہے۔ فالج کے شکار افراد کے لیے صحت بخش خوراک جسم کو تندرست رکھنے میں مددگار ثابت ہوگی۔ فالج کے شکار افراد اپنا وزن کنٹرول کر سکتے ہیں، بلڈ پریشر کو برقرار رکھ سکتے ہیں اور یقیناً دوسرے فالج کے خطرے کو کم کر سکتے ہیں۔ اس سلسلے میں ماہر غذائیت سے مشورہ کریں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ شفا یابی کے لیے ہر ایک کی خوراک کا انداز مختلف ہوگا۔ تاہم، فالج کے شکار افراد کے لیے ابھی بھی تجویز کردہ خوراک موجود ہے۔ فالج کے شکار افراد کے وزن کو کنٹرول کرنے کے لیے صحیح غذا کا انتخاب کیا جا سکتا ہے۔ فالج سے بچ جانے والے یا صحت یاب ہونے والوں کو ہری سبزیوں کا استعمال بڑھانے کی ضرورت ہے۔ بیریوں کا انتخاب ان کھانوں میں سے ایک ہے جسے کھانے کی بھی ضرورت ہے۔

فالج کے علاج کے لیے غذائی اجزاء اور وٹامنز

کئی غذائی اجزاء ہیں جو فالج کے شکار افراد کو ہر روز ملنے چاہئیں۔ یہ فہرست ہے:

1. فولک ایسڈ، وٹامن B6، اور B12

امینو ایسڈ ہومو سسٹین کی زیادہ مقدار فالج کا خطرہ بڑھا سکتی ہے۔ بی وٹامنز کے کئی انتخاب امینو ایسڈ ہومو سسٹین کو توڑنے میں مدد کر سکتے ہیں تاکہ جسم میں صرف چند لیول باقی رہ جائیں۔

2. وٹامن سی

وٹامن سی سبزیوں اور پھلوں سے حاصل کیا جا سکتا ہے۔ مدافعتی نظام کو بڑھانے کے علاوہ وٹامن سی خون کی خراب شریانوں کی مرمت میں بھی مدد کر سکتا ہے۔ یہ وٹامن شریانوں میں پلاک کے جمع ہونے کو بھی کم کر سکتا ہے۔

3. وٹامن ڈی

وٹامن ڈی کی کمی آپ کو خون کے بہاؤ میں رکاوٹ کے خطرے میں ڈال سکتی ہے۔ اس وجہ سے، فالج کے شکار افراد کو ڈاکٹر کی تجویز کردہ خوراک کے مطابق وٹامن ڈی کا باقاعدگی سے استعمال کرنا چاہیے۔

4. وٹامن ای

وٹامن ای لینے سے دماغ کو پہنچنے والے نقصان کو ٹھیک کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔ وٹامن ای فالج کی وجہ سے دماغ میں یادداشت کی خرابی کو دور کرنے میں مدد کر سکتا ہے۔

5. اومیگا 3

اومیگا 3 فیٹی ایسڈ سیل کو پہنچنے والے نقصان کو روک سکتا ہے جو فالج کے شکار افراد میں ہوسکتا ہے۔

6. میگنیشیم

یہ غذائی اجزاء بلڈ پریشر کو کم کرنے کے لیے ضروری ہیں۔

وہ غذائیں جو فالج کے مریضوں کو کھائیں۔

صحیح خوراک کا انتخاب صحت یابی کو تیز کرنے میں مدد کر سکتا ہے۔ یہاں کھانے کی کچھ اقسام ہیں جن کا استعمال اور پرہیز کرنا چاہیے:

1. گری دار میوے کا استعمال

گری دار میوے فولک ایسڈ، پوٹاشیم، آئرن اور میگنیشیم کا بہترین ذریعہ ہیں۔ کچھ گری دار میوے کولیسٹرول میں بھی کم اور فائبر میں زیادہ ہوتے ہیں۔ آپ اپنی پسند کی پھلیاں یا چنے کو سوپ یا سٹو میں شامل کر سکتے ہیں۔

2. چربی والی مچھلی کا انتخاب کریں۔

مچھلی میں صحت بخش فیٹی ایسڈز ہوتے ہیں جو خون کی روانی کو ہموار رکھتے ہیں۔ایک تحقیق میں بتایا گیا کہ جو لوگ مچھلی کھاتے ہیں اور سرخ گوشت نہیں کھاتے ان میں دل کا دورہ پڑنے کا خطرہ 13 فیصد کم ہوتا ہے۔ مچھلی میں صحت مند فیٹی ایسڈز ہوتے ہیں جو دل کی صحت کو بہتر بنا سکتے ہیں اور خون کی روانی کو ہموار رکھتے ہیں۔

3. سبز یا کالی چائے

چائے میں flavonoids ہوتے ہیں جو کولیسٹرول اور بلڈ پریشر کو کم کرنے میں مدد کرتے ہیں۔ ایک تحقیق میں کہا گیا ہے کہ جو لوگ سبز چائے یا کالی چائے پیتے ہیں ان میں فالج کے دوبارہ ہونے کا خطرہ کم ہوتا ہے۔ اس کے علاوہ کالی چائے ذیابیطس کے خطرے کو کم کرنے میں بھی مدد دیتی ہے۔ کالی چائے میں موجود مرکبات جسم میں انسولین سے مشابہت رکھتے ہیں۔ فوائد حاصل کرنے کے لیے روزانہ کم از کم تین کپ استعمال کریں۔

4. زیادہ نمک اور چینی سے پرہیز کریں۔

باقاعدہ پروسیسرڈ فوڈز میں سب سے زیادہ چینی اور نمک ہوتا ہے۔ یہ وہی ہے جو خون میں تختی کی تعمیر کو متحرک کرتا ہے۔ اس کے علاوہ، آپ کو ڈیسرٹ کو بھی کم کرنے کی ضرورت ہے جس میں بہت ساری چینی ہوتی ہے۔ بڑے کھانے کے بعد میٹھا کھانے کی خواہش کو کم کرنے کے لیے زیادہ پانی کا استعمال کریں۔ پرمینکس نمبر 30 کے مطابق، تجویز کردہ چینی کی کھپت 50 گرام یا 4 چمچ فی شخص فی دن کے برابر ہے۔ جبکہ تجویز کردہ نمک کی کھپت 2000 ملی گرام یا 1 چائے کا چمچ فی شخص فی دن کے برابر ہے۔

5. متوازن غذائیت والی خوراک کھائیں۔

غذائیت کے لحاظ سے متوازن غذا وہ ہوتی ہے جس میں ایک سرونگ میں مختلف قسم کے غذائی اجزاء ہوتے ہیں جو آپ کی ضروریات کے مطابق ہوتے ہیں۔ روزانہ کی خوراک کے ذریعے کاربوہائیڈریٹس، پروٹین، چکنائی، وٹامنز اور منرلز کی ضروریات پوری کریں۔ آپ زیادہ سبزیاں اور پھل کھا سکتے ہیں۔ ہری سبزیاں شامل کرنا یقیناً ایک فریضہ ہے جو فالج کے شکار افراد کو کرنا چاہیے۔ پھر، سبزیوں اور پھلوں کو دوسرے رنگوں کے ساتھ منتخب کرنے کی کوشش کریں، جیسے کہ جامنی، پیلا، نیلا اور بھورا۔ اس طرح، آپ کو مزید غذائی اجزاء مل سکتے ہیں جو فالج سے صحت یاب ہونے میں مدد کرتے ہیں۔ [[متعلقہ مضمون]]

SehatQ کے نوٹس

صحیح غذا کا انتخاب آپ کو فالج کے دوران ہونے والے خلیوں کے نقصان کو بحال کرنے میں مدد کر سکتا ہے۔ فالج کے شکار افراد کے لیے جسم کو درکار مناسب غذائیت کو یقینی بنائیں۔ غذائیت کے ماہر سے مشورہ کرنے کی کوشش کریں تاکہ ان کھانوں کی صحیح سطح حاصل کی جا سکے جن کے استعمال کی اجازت ہے۔ فالج کے شکار افراد کے لیے غذائیت کے بارے میں مزید بات کرنے کے لیے، اپنے ڈاکٹر سے براہ راست پوچھیں۔ HealthyQ فیملی ہیلتھ ایپ . پر ابھی ڈاؤن لوڈ کریں۔ ایپ اسٹور اور گوگل پلے .